ؑعذرا منصور

ؑعذرا منصور

بچپن کہاں گذرا؟
میرا بچپن بنگلہ دیش (ایسٹ پاکستان) میں گذرا میرے بچپن کی بہت سی یادیں ہیں جنہیں آج بھی یاد کر کے دل اُداس ہوتا ہے مگر میں کہیں بھی جاوں میر ی اصل پہچان پاکستان ہے۔
بچپن کتنا شرراتی تھا؟
میں لڑکی کم اور لڑکا زیادہ تھی میرے شوق عجیب تھے سایئکل چلنا، پتنگ اڑانا،فٹ بال یہ سب میر ے پسندیدہ کھیل تھے۔ میں آج بھی جب امریکہ جاتی ہوں تو میرے پوتے میرے لئے موٹر سایئکل صاف کر کے رکھتے ہیں کہ دادو آئے گی تو وہ چلئے گی۔
تعلیم کہاں سے لی؟
میں نے اپنی گر یجویشن کوئٹہ سے مکمل کی میر ے والد چونکہ آرمی میں تھے تو بچپن سے گھر کا ماحول پڑھا لکھا تھا تو پڑھائی کے معاملے میں زرا سختی تھی۔

ؑعذرا منصور

کیا میڈیا کے لئے اجازت آسانی سے ملی تھی؟
بالکل نہیں۔ میرے والد بہت سخت تھے میں سوچ بھی نہیں سکتی تھی کہ میں میڈیا میں کام کروں گی مگر شاید اللہ جی کو یہ ہی منظور تھا۔ میں اپنے اللہ کا جتنا شکر اد ا کروں کہ میں نے جتنا بھی کام کیا ہے بہت اچھا اور لوگوں نے پسند کیاہے اور عزت دی ہے۔
ریڈیو کا تجر بہ کیسا رہا؟
ریڈیو میرا فرسٹ لو ہے میری ٹیچر بیگم خورشید مجھے بہت پیا ر کرتی تھی مجھے شروع سے ہی لکھنے کا بہت شوق تھا تو بیگم خورشید نے لکھنے کوکہاتو میں نے ایک سٹوری لکھی جو انہیں بہت پسند آئی تو انہوں نے پھر پہلا ریڈیو پروگرام (کالج میگزین) کے نا م سے شروع کروایا تو یوں میری ریڈیوپہ پہچان بنی۔

کیا آپ سمجھتی ہیں کہ ایک تیس سال کی ایکٹر س کو ساٹھ سال کی بوڑھی عورت کا کردار ملے؟
میں اس با ت کو اچھا نہیں سمجھتی کہ ایک تیس سال کی ایکٹرس کو ساٹھ سال کی عورت کا کردار ملے آج کے ویورز اتنے پاگل نہیں ہیں اگر میں اپنی با ت کروں تو میں ہرگز ایسا کام نہیں کروں گی جو میر ی شخصت کو بگڑدیں۔ میں نے پی ٹی وی کے ڈرامہ (آنکل عُرفی) میں مین کردار ادا کیامگر میں نے اپنے بہت سے ایسے کریکٹرز نہیں عکس بند کروائے جومجھے پسند نہیں تھے مجھے کسی ڈارمے میں ماں کا کردار کرنا بہت اچھا لگتا ہے اور اکژ مجھے کہتے ہیں کہ آپ ہماری والدہ جیسی ہیں تو میں سمجھتی ہوں کہ یہ میرے لئے ایک اللہ جی کی رحمت ہے۔
آپ رائٹر بھی ہیں ڈایریکٹ بھی کرتی ہیں کون سا زیادہ مشکل ہے؟
میں سمجھتی ہوں کہ کام کوئی بھی ہو آسان ہوتا ہے ضرورت صرف محنت کی ہے۔ میں نے پہلی با ر پاکستان میں فلم پروڈکشن متعارف کروائی جس کا نام(THE MOVIE MAN) (تھا اس پروڈکشن کی پہلی فلم کا نام (لغزش) تھا۔ اس کی کاسٹ میں نیلما حسن، فاروق مظہر، محمود اختر، بدر خلیل اور امتیاز ااحمد تھے جہاں تک بات لکھنے کی ہے تو میں ہمیشہ لوگوں کے درد کو محسوس کر کے لکھتی ہوں۔
آپ ایک سوشل ورکر بھی ہیں کیسا لگتا ہے لوگوں کے درد جان؟
میں نے بچپن سے اپنے والد ہ کو لوگوں کے لئے کام کرتے دیکھا ہے میرے والد صاحب کی تنخواہ بہت زیادہ نہیں تھی مگر میر ی والدہ اس سے میں کچھ پیسے بچا کر لوگوں کی مدد کرتی تھیں وہ مجھے ہمیشہ کہتی تھیں کہ لوگوں کی مد د کرنے والوں سے اللہ خوش ہوتا ہے تو میں نے اس سوشل ورک کو میں اپنے لائف سٹائل کا حصہ بنا لیا۔
سند ھ کے علاقہ چھاچھو میں تازہ پانی ایک خواب تھا مگر آپ نے اس خواب کو پورا کر دیکھایا اس کی وجہ؟
یہ حکو متوں کے کر نے کے کام تھے جو بد قسمتی سے ہمیں کرنا پڑا۔ میں نے جو کیا جو لوگوں کے درد کو محسوس کرتے ہوئے کیا اوراللہ کا لاکھ لاکھ شکر ہے کہ میں نے کر دکھایا اس کے کم ازکم پانچ لاکھ کا خرچہ تھا مجھے نہیں پتہ کہ کہاں سے مدد آئی۔ اب سندھ کے لوگ تازہ پانی پیتے ہیں تو سکون ملتا ہے۔ اس پروجیکٹ میں مجھے سندھ کے وڈیروں سے جان سے مارنے کی دھمکیاں بھی ملی مگر میں نے جو سوچااللہ کی رحمت سے کر دکھایا۔
آپ کو کراچی کو تعلیم دینے کا خیال کہاں سے آیا؟
مجھے بچپن سے شوق تھا کہ میں اپنے اللہ کو راضی کروں میں نے اس جگہ تعلیم دینے کا سوچا جہاں شاید ٹارگٹ کلنگ رہی اور بری سیاست کا شکار رہے میں نے وہاں نے وہاں بچوں کی صحت کے حوالے سے، تعلیم کے حوالے سے کافی کام کیا۔
اپنی فیملی کو کتنا ٹائم دیتی ہیں؟
میں نے اپنے بچوں کو پورا ٹائم دیا ہے میری فیملی میر ی جان ہے میں نے اپنی فیملی کی وجہ سے پی ٹی وی کے بہت بڑیبڑے پروجیکٹ چھوڑیں جس میں افشاں،عروسہ، شمع شامل ہیں۔
ہمارے ڈرامے آج کل تنقید کا نشانہ کیوں ہے؟
میں سمجھتی ہوں کہ شاید اب ناظرین کے خیالات بھی بدل گئے ہیں اور نئے آنے والے فنکار وں کا وہ جذبہ بھی نہیں رہا۔ آج کل نیا ٹیلنٹ شہرت، پیسہ حاصل کر نے کے لئے کچھ بھی کرنے کو تیا ر ہے شاید یہ ہی وجہ ہے کہ اب ڈرامے کا میعار بھی وہ نہیں رہا ورنہ پاکستان کے ڈرامے سڑکیں خالی کروادیتے تھے مگر اب بھی بہت اچھا کام ہورہا ہے آج بھی اچھے فنکار موجود ہیں جس میں اسماء عباس،صباء قمر،احسن خان شامل ہیں۔
کوئی پیغام جو پاکستانی کی لڑکیوں کو دینا چاہتی ہیں؟
دل لگا کے محنت کریں پاکستان کو محنتی اور ایماندار لوگوں کی بہت ضرورت ہے اپنے ملک سے پیار کریں پاکستان جیسا ملک کہیں نہیں ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں