شاہدہ عباسی مارشل آرٹ

شاہدہ عباسی مارشل آرٹ

پاکستان اور پاکستان کے لوگ کسی سے کم نہیں جب بات پاکستان کی عزت کی ہو تو پھر چاہے جان جائے مگر پاکستان کی شان نہ جائے۔کراٹے یعنی مارشل آرٹ کا کھلاڑی ہونا کوئی چھوٹی بات نہیں یہ وہ کھیل ہے جو لڑکے اور لڑکیوں میں مشترک پایا جاتا ہے۔ ساوتھ ایشین گیمز میں 2019میں کے مقابلاجات میں پاکستان کے ہنر مندنوجوانوں نے 132 میڈلز لئے جن میں سے 32میڈلز گولڈ کے تھے۔ یہ مقابلاجات نیپال کے شہر کھٹمنڈو میں ہوئے۔بلوچستان سے تعلق رکھنے والی پاکستان کی ہنر مند بیٹی شاہدہ عباسی نے گولڈ میڈل اپنے نا م کیا بلوچستان سے تعلق رکھنے والی شاہدہ نے نہ صرف کم عمری میں قومی بلکہ بین الاقوامی سطح پر اپنے ملک کا نام روشن کیا ہے۔

شاہدہ عباسی مارشل آرٹ
                                                                                                        شاہدہ عباسی مارشل آرٹ

شاہدہ عباسی مارشل آرٹ

اپنے بھائی کو کراٹے کی دنیا میں ان کروانے گی تو صورت حال دیکھ کے نہ صر ف حیران ہوئی کہ کراٹے جو کہ مار دھار کا کھیل ہے اسے لڑکیاں بھی کھیل سکتی ہیں تو اپنی زندگی بھی اسی کھیل کے نام کر کے آگئی اور داخلہ لے لیا۔شاہدہ نے 2005میں کراٹے کھیلنے کا ٖفیصلہ کیا جس کا اندازہ ان کی کامیابیاں دیکھکر کیا جا سکتا ہے۔ہزارہ ٹاؤن میں ان کے استاد غلام علی نے بتایا کہ جب شاہدہ میرے پاس آئی تو اس کا شوق دیکھ کر میں بھی اسے کراٹے کی ٹرنینگ دیئے بغیر نہ رہ سکا ا سنے ہمیشہ میرا سر فخر سے بلند کیا ہے اور ہمیشہ کامیابیا ں لی ہیں۔شاہدہ کے مطابق وہ ساوتھ ایشین گیمزکے لئے تیا ر نہیں تھی لیکن نیشنل گیمز کے دوران یہ شرط رکھی گی کہ جو یہاں میڈل لے کر اپنا نام بنائے گا اس کا نام ساوتھ ایشین گیمز کے لئے دیا جائے گا۔
شاہدہ نے بتایا کہ نیپال کے لوگ بہت پر جوش تھے مگر ہم نے بھی پاکستا ن کی عزت رکھنی تھی تو ڈٹ کر مقابلہ کیا۔جبلڑکیوں کے مقابلے کی باری آئی تو ان میں سے پہلا نمبر ہی شاہدہ کا تھا۔ شاہدہ نے اپنے مخالف کھلاڑی کو ہارا کر پاکستان کا نام روشن کیا۔ یاد رہے کہ شاہدہ نے جو گولڈ میڈل جیتا وہ ان مقابلوں میں پہلا گولڈ میڈل تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں