غریدہ فاروقی کی شخصیت

غریدہ فاروقی کی شخصیت

آپ کا بچپن کہا ں گذرا؟

میں سعودی عر ب میں پیداہوئی اور کچھ عرصے بعد ہم واپس آگئے وطن سے محبت مجھے واپس کھنچ لائی۔ مین نے بہاوُالدین زکریا یوینورسٹی سے انٹر نشنل ریلیشن میں ماسٹر کیا اور گولڈ میڈل بھی لیا۔

اگر آپ جرنلسٹ نہ ہوتی توکیا ہوتی؟

میں فارن منسٹر بننا چاہتی تھی یا کسی بھی  انٹر نشنل ادارے کے ساتھ نوکری کرنا چاہتی تھی مگر شاید قسمت کو کچھ اور ہی منظور تھا اللہ کا لاکھ لاکھ شکر ہے کہ میں آج اپنے کا م سے بہت خوش ہوں۔ شروع میں میر ے لئے بہت مشکلات تھی کیونکہ مگر ماں باپ کی دُعاوں سے اور اپنی محنت سے اپنی جگہ بنائی ورنہ میڈیا میں اپنا نام بنانا بہت مشکل ہے اور خاص طور پر آج کا میڈ یا بہت فاسٹ ہے بہت سخت مقابلہ ہے ہر دوسرا میڈیا پرسن ایک دوسرے سے سبقت لینا چاہتاہے۔

غریدہ فاروقی کی شخصیت

اس سفر میں کیا کیا کچھ برداشت کرناپڑا؟

آج کا میڈ یا بہت سخت مقابلہ دیتا ہے ٹی وی چینل کی بھرمار کی وجہ سے بہت سے لوگ ناکام بھی ہوئے۔ میں نے اپنا کریئر پاکستان ٹیلی ویژن سے بطور ینوز کاسٹر کیامیں آج اپنے اس فیصلے سے بہت خوش ہوں۔ اس وقت میرا سٹارٹ تھا بہت سی مشکلا ت تھی بہت سے لوگ باتیں کرتے تھے مگر میرے امی ابو کی سپورٹ ہمیشہ میر ے ساتھ رہی لوگ جب بھی میر ے کام کی تعریف کرتے تو مجھے فون کرتے اور تنقید کرتے تو امی ابو کو فون کرتے تھے مگر اُنہوں نے ہمیشہ مجھے حوصلہ دیا کہ تم محنت کرودل لگا کے اپنا کام کرو ابھی ہم زندہ ہیں مگر اب مجھے دکھ ہوتا ہے جب وہ اس دُینا میں نہیں میں ان کے لئے بہت کچھ کرنا چاہتی تھی مگر جو اللہ کا فیصلہ۔

کس چینل نے غریدہ فاورقی کو پہچان دی؟

میں اپنے اللہ کا جتنا شکرادا کروں کم ہے کہ میں نے جس چینل میں بھی کام کیا ہمیشہ اپنی پہچان اپنے کام اور محنت سے بنائی۔ جیو ینوز سے میں اچھی خبر یں پڑھنا سکھی، سماء ینوز سے اچھی رپوٹر ٹنگ سکھی اور اب اللہ کا لاکھ لاکھ شکر ہے کہ میں اپنا پروگرام کرتی ہوں اور میں نے ہمیشہ کوشش کی کہ میں ہر خبر کی تصدیق کے با ت ہی با ت کروں تاکہ عوام تک اچھی خبر پہنچ سکے اور اب آپ نیوز پر بھی اپنے کام سے اپنا لوہا منوا رہی ہوں۔

 آپ اچھی اینکر تو ہیں کیا غریدہ فاورقی ایک ملن سار انسان بھی ہے؟

الحمدللہ مجھے لوگوں سے ملنا اچھا لگتا ہے میں نے ہمیشہ کوششکرتی ہوں کہ لوگوں کی ہر ممکن حد تک مدد بھی کروں اور اللہ سے ہمیشہ ایک ہی دُعا کرتی ہوں کہ اللہ جی غرور اور تکبر سے دور رکھیں۔

کوئی پیغام جو یوتھ کو دینا چاہتی ہیں؟

بس دل لگا کر اپنا کام کریں اور کبھی بھی مت سوچے کہ لوگ آپ کے بارے میں لوگ کیا کہے گئے۔ اپنا مقصد پوراکر کے ملک کا نام روشن کرئے۔  

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں