کشمیریوں پر ظلم کی کوریج پر صحافیوں کو ایواڈ دیا جا رہا ہے

کشمیریوں پر ظلم کی کوریج پر صحافیوں کو ایواڈ دیا جا رہا ہے

امریکی کے خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کے فوٹوگرافروں نے مقبوضہ کشمیر کی صورتحال کی دلیری سے کوریج کر نے پر پولٹزرپرائز حاصل کرلیا۔
ڈار یاسین، مختار خان اور چَنی آنند نہتے کشمیریوں ظلم انتہائی مشکل حالات میں تصویری شکل میں دنیا کے سامنے لے کر آئے۔

کشمیریوں پر ظلم کی کوریج پر صحافیوں کو ایواڈ دیا جا رہا ہے

 کشمیریوں پر ظلم کی کوریج پر صحافیوں کو ایواڈ دیا جا رہا ہے
                        کشمیریوں پر ظلم کی کوریج پر صحافیوں کو ایواڈ دیا جا رہا ہے

ان تینوں فوٹو جرنلسٹس کو مقبوضہ کشمیر میں کرفیو اور تشدد سے بھی خوف نہ آیا اور انہوں نے ان مشکل حالات کو بھی پیشہ ورانہ ذمہ داریوں کی راہ میں رکاوٹ نہ بننے دیا۔ موبائل فون اور انٹرنیٹ کی عدم دستیابی بھی ان کے کام کو نہ روک سکی ۔انہوں نے اپنی جان ہتھیلی پر رکھ کر نہتے کشمیری پر مظالم کی کوریج کی اور دنیا کو بھارت کا حقیقی چہرہ دکھایا۔
ڈار یاسین، مختار خان اور چنی آنند کا کہنا ہے کہ بھارتی مظالم اور وادی میں پابندیوں نے دنیا تک سچ پہنچانےکے لئے ان کے حوصلے پست نہیں کئے۔یاد رہے کہ یہ ایوارڈ ہنگرین 1917 میں نژاد امریکی صحافی جوزف پولٹزر کے نام سےمنسوب کیا گیا تھا۔ یہ ایوارڈ شعبہ صحافت کے سب سے بڑے اعزازات میں شمار ہوتا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں