کوروناوائرس کے حوالے سمینار

کوروناوائرس کے حوالے سمینار

سندھ انسٹیٹوٹ آف یورولوجی انیڈ ٹرانسپلانٹ میں کوروناوائرس کے حوالے سے ایک سیمنار کاانقعاد کیاگیا جس میں ماہرین نے کوروناوائرس کے پھیلنے کی تمام وجوہات بیان کی۔
ایسوسی ایٹ پروفیسر ڈاکٹر اسما نسیم نے اس حوالے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ کورونا وائرس کا فی عر صے سے انسان کی زندگی کو متاثر کرتا آرہا ہے لیکن اب اس کی نئی جڑیں سامنے آئی ہیں ان کا مزیدکہنا تھا کہ یہ وائرس جانوروں سے انسانوں میں منتقل ہوتے ہیں اور انسانوں کی زندگی کو متاثر کرتے ہیں۔

Effective and Powerful seminar in Sindh about Coronavirus
Corona Virus Transformation ​

کوروناوائرس کے حوالے سمینار

یہ نیا کورونا وائرس جانوروں کی منڈی سے ہوتا ہوا ایک شخص سے دوسرے شخص کو لگتا ہے چونکہ یہ وائرس کی ایک نئی قسم ہے لہٰذا دنیا اس کے خوف میں مبتلاہے جس کی ایک اہم وجہ اس کا علاج نہ ہونا بھی ہے، اس بیماری سے متعلق انھوں نے کہا کہ یہ وائرس دوسری اقسام کی وائرس سیکمن خطرناک ہے۔
ایس آئی یو ٹی کے ایسوسی ایٹ پروفیسرڈاکٹر سنیل دودانی نے کہا کہ اگر کسی شخص کو بخار، خشک کھانسی اور سانس لینے میں دشواری ہو اور اس نے چین کا سفر کیا ہو تو وائرس کاخطرہ ہوسکتا ہے۔
انھوں نے کہا کہ چین میں اب اس وبا کی شدت میں کمی آرہی ہے، انھوں نے کہا کہ 18 فروری تک 71429 افراد میں اس بیماری کی تصدیق ہوئی جس میں سے 1775 لوگ زندگی سے ہاتھ دھوبیٹھی ہیں جس میں 98 فیصد لوگوں چین سے تعلق رکھتے تھے، انھوں نے کہا کہ پاکستان میں ابھی تک کوئی کیس سامنے نہیں آیا۔
پروفیسر شہلا باقی نے اس مرض سے بچاو کے حوالے سے کہا کہ ہاتھوں کی حفظان صحت کو بنیاد قرار دیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

کوروناوائرس کے حوالے سمینار” ایک تبصرہ

اپنا تبصرہ بھیجیں