اگراسمبلیاں تحلیل ہوئیں تو ضمنی الیکشن عام انتخابات تک موخرہونے کا خطرہ، رانا ثناء اللہ

اسلام آباد: وزیر داخلہ رانا ثنا اللہ نے بیان دیا ہے کہ ٹی ٹی پی کا کوئٹہ حملے کی ذمہ داری قبول کرنا کسی لمحہ فکریہ سے کم نہیں‌ ، ٹی ٹی پی سے کافی مذاکرات ہوئے مگر دوسرا دھڑا حملے کر نے لگتا ہے ۔

رانا ثناء اللہ نے اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ بلوچستان میں دہشت گردی کے واقعے کی جتنی بھی مذمت کیجئے کم ہے ، ٹی ٹی پی کا اس واقعہ کی ذمہ داری قبول کرنا قابل مذمت ہے اور یہ ہمارے ہمسایہ ممالک کے لئے بھی لمہہ ِ فکر یہ ہے ، واقعہ تشویش ناک ہے مگر ہمیں دہشت گردوں پر قابو پانا ہوگا۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ سیکیورٹی کے حوالے سے وزیراعظم کی سربراہی میں اجلاس میں کے پی کے کے وزیراعلیٰ کی عدم شرکت قابل افسوس حر کت ہے، خیبر پختونخوا کی صوبائی حکومت کا کام ہے کہ دہشت گردی میں ملوث عناصر کو جڑ سے ختم کر نے کے لئے سخت سے سخت اقدامات کرے، وفاق صوبائی حکومتوں کی ہر طرح سے مدد کر نے کو تیار ہے۔

رانا ثناء اللہ نے کہا کہ عمران خان ملک کو عدم استحکام کی طرف لے جا رہے ہیں،توشہ خانہ کی بات کر تے ہوئے انہون ںے کہا کہ عمران خان نے توشہ خانے سے گھڑیاں چوری کیں اورملک سے باہر بیچ دی، عمران خان نے کرپشن کی گھٹیا ترین مثال قائم کی ہے ، 26 نومبر کوعمران خان کو راولپنڈی میں تاریخی شکست ہوئی.

یہ بھی پڑ ھیں‌: عمران خان دونوں صوبائی اسمبلیاں چاہ نہیں توڑ سکتے، رانا ثناء اللہ

وزیر داخلہ نے کہا کہ عمران خان صاحب صوبائی اسمبلیوں کو توڑنے کی بات کرتے ہیں پھر سینیٹ کی سیٹ سے بھی جگہ خالی کر یں‌اور صدر بھی استعفی دے، اب 20 دسمبر کو اسمبلیاں توڑنے کی بات کر نے بات کر رہے ہیں ، اور یہ اسمبلیاں توڑنے کا عمل انتہائی غیر سیاسی ہے۔

یہ بھی پڑ ھیں‌: پاکستان تحریک انصاف کے بانی عمران خان کا تمام اسمبلیوں سے نکلنے کا فیصلہ

رانا ثناء اللہ نے کہا کہ اسمبلیوں کے تحلیل ہونے سے آئین پر عمل ہوگا، اس ساری صورت ِ حال میں ہم الیکشن لڑنے کیلئے تیار ہیں اور حالات کئسے بھی ہوں ہم اپنی مدت پوری کر یں‌گئے.

پریس کانفرنس میں ان کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان کی مسلح افواج اور ادارے دہشت گردوں سے نمٹنے کے لیے ہر دم تیار ہیں، یہ صوبائی حکومتوں کا فرض ہے کہ امن و امان کے قیام کے لئے سنجیدہ لائحہ عمل اختیار کریں۔

ارشد شر یف کے قتل کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ ارشد شریف کے قتل کے لیے حکومتی کمیشن ارشد شر یف کے اہل خانہ نے اعتماد نہیں کیا، سپریم کورٹ سے درخواست کی ہے کہ وہ جلد از جلد تحقیقات کے لیے کمیشن بنائے، امید ہے جلد ہی سپریم کورٹ فیکٹ فائنڈنگ کمیشن بنا دے گی.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اگراسمبلیاں تحلیل ہوئیں تو ضمنی الیکشن عام انتخابات تک موخرہونے کا خطرہ، رانا ثناء اللہ” ایک تبصرہ

اپنا تبصرہ بھیجیں